19

سوال:کیا میں اپنے دماغ کی کارکردگی کیسے بڑھا سکتا/سکتی ہوں؟

سوال:کیا میں اپنے دماغ کی کارکردگی کیسے بڑھا سکتا/سکتی ہوں؟
جواب:
آپ اپنے جسم کی کارکردگی تو بڑھا سکتے ہیں لیکن
کیا دماغ کے لیے کوئی کسرت کر سکتے ہیں؟
ڈاکٹر ڈو ویری لٹل Dr:Do very little (فرضی نام)
کی دماغ کی کارکردگی بڑھانے والی کلاسس پر پیسہ خرچ کرنے سے پہلے آپ کو کیمبرج یونیورسٹی میں کیے گئے تجربہ پر نظر ڈالنی ہوگی
انھوں نے 8 ماہرین 12 دماغی گیمز اور 1100سے زیادہ والنٹئر پر مشتمل گروپ کو 6 ہفتوں تک دماغی مشقیں دی۔
اور یہ جواب پایا کہ انکی دماغی کارکردگی پر کوئی بھی اثر نہیں ہوا۔

آپ دماغی مشقیں کر سکتے ہیں لیکن اس میں کچھ گنی چنی چیزوں میں آپ بہتر ہو سکتے ہیں۔

1993 میں کچھ مزدوروں پر ایک تجربہ کیا گیا کہ
ایک گروپ کو موذاٹ کا گانا سنایا گیا اور دوسرے گروپ کو نہیں اس سے گانا سننے والے گروپ کی کارکردگی اچھی ہوئی لیکن گانے کے بعد یہ اثر صرف 15 منٹ تک رہا اور بعد میں یہ نتیجہ نکالا کہ موذاٹ کا گانا لازمی نہیں ہے یہ کسی بھی میوزک سے کام ہوسکتا ہے۔

#دماغ_کی_کارکرگی_بڑھانے_کا_ایک_طریقہ_ہے۔
کوئی بھی ساز بجانا،یہاں تک کہ ڈرمز بھی۔
آپ کا دماغ کچھ کچھ گوندھے ہوئے آٹے یا مٹی کی طرح ہے،آپ جو چیزیں کرتے ہے اسکے مطابق دماغ میں بدلاؤ آتا ہے۔
میوزیشن کے دماغ کے دونوں حصوں کا تال میل اچھا ہوتا ہے۔
ساز بجانا سیکھنا ایک ایسا کام ہے جس میں پورا دماغ ایک ساتھ کام کرتا ہے،یعنی دماغ کے الگ الگ حصے ایک دوسرے سے باتیں کرتے ہیں۔
میوزک دماغ کو بدل سکتا ہے،نیورو پلاسٹسٹی کی وجہ سے جب آپ پیانو بجانا سیکھنے جیسی کوئی چیز کرتے ہیں تو تب آپ کے دماغ میں نئے کنکشن بنتے ہیں۔
دراصل یہی دماغ کے لیے ایک صحیح کسرت ہے۔

لیکن بات یاد رکھیں
کسی بھی چیز کو ٹھیک سے سیکھنے کے لئے
10 ہزار گھنٹوں کا وقت لگتا ہے،
اور وقت کے ساتھ ساتھ آپ گوندھا ہوا دماغ سخت ہونے لگتا ہے۔

پر دماغ کی کارکردگی بڑھانے کا ایک اور طریقہ بھی ہے،
اور اس کے بچپن سے شروعات کرنے کی بھی ضرورت نہیں ہے۔
لندن میں ٹیکسی ڈرائیور بننے کے لئے دس کلومیٹر کے دائرے میں 25 ہزار راستے یاد کرنے پڑتے ہیں،
کچھ ماہرین نے ان کے دماغوں کی جانچ کی اور پتہ چلا کہ انکی یادداشت کا حصہ بڑا تھا،
انکا ہیپوکیمپس Hippocampus اس زیادہ جانکاری کو اکھٹا کرنے کے لیے بڑھ گیا تھا،لیکن پھر بھی انکو چھٹے پیسوں کا حساب کرنا مشکل لگ رہا تھا۔

ایسا نہیں ہے کہ آپ ہر چیز میں پروفیکٹ ہوں،
آپ ایسے لوگوں کے دماغ کو دیکھیں گے جو کامیاب ہیں اور جو ناکام ہیں تو دونوں کے دماغ کے حصوں میں فرق ہے،یہ انکے دماغ کے الگ ہونے کا ثبوت ہے۔
تحریر و ترجمہ:ہانیہ ملک
نوٹ:یہ پوسٹ بی بی سی کی ایک ویڈیو سے ترجمہ کی ہے۔
یو ٹیوب پر یہ فنی ویڈیو ہے 🔽
لیکن دماغ کی پلاسٹسٹی کی بہترین مثال ہے

اس مضمون پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں