43

سائنس آسان (10) (آخری قسط: جانداروں کی گروہ بندی)

سائنس آسان (10)
(آخری قسط: جانداروں کی گروہ بندی)

تحریر: ڈاکٹر یونس خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

امریکی سائنسدان رابرٹ وٹیکر (Robert Whittaker) وہ پہلا سائنسدان تھا جس نے سن 1969 میں دنیا بھر کے جانداروں کی اٹھارہ لاکھ سے زائد انواع کو پانچ بڑے گروہوں میں تقسیم کر کے اسوقت تک کی تمام کاوشوں کو نیا موڑ دے دیا اور ہر قسم کی سابقہ گروہ بندیوں کو قصۂ پارینہ بنا کے رکھ دیا۔ وہ ایک جینیئس تھا اور جینیئس یوں ہی کیا کرتے ہیں۔

اس طرح بننے والے پانچ گروہوں کو گروپ کی بجائے کنگڈم Kingdom کا خوبصورت نام دیا گیا۔ یوں دنیا میں اب جانداروں کے پانچ بڑے کنگڈمز ہیں۔

1۔ کنگڈم مونیرا یا پروکیریوٹا
Kingdom Monera or Prokaryota

2۔ کنگڈم پروٹسٹا (Kingdom Protista)

3۔ کنگڈم فنجائی (Kingdom Fungi)

4۔ کنگڈم پلانٹی (Kingdom Plantae)

5۔ کنگڈم اینیمیلیائی (Kingdom Animaliae)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
1۔ کنگڈم مونیرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

🔸اس کنگڈم میں بیکٹیریا، سائنو بییکٹیریا اور آرکیا (Archaea) شامل ہیں۔

🔸یہ سب پروکیریوٹک سیلز کے حامل ہوتے ہیں۔

🔸اکثریت یک خلوی جانداروں پر مشتمل ہیں۔

🔸تمام جاندار خورد بینی ہیں۔

🔸ان کی سیل وال میورین (Murein) کی بنی ہوتی ہے۔

🔸صرف سائنو بیکٹیریا، فوٹو سنتھیسز کی مدد سے اپنی خوراک خود تیار کر سکتے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
2۔ کنگڈم پروٹسٹا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

🔸یہ کنگڈم یوکیریوٹک جانداروں پر مشتمل ہوتا ہے جو کہ اپنے تنوع کے لحاظ سے کسی اور کنگڈم میں جگہ نہیں پا سکتے۔

🔸یہ جاندار یک خلوی اور کثیر خلوی ہوتے ہیں۔

🔸زیادہ تر خوردبینی اور پانی میں پائے جاتے ہیں۔

🔸ان میں سے کچھ یک خلوی جو اپنی خوراک تیار نہیں کر سکتے، حیوانات کی مانند ہوتے ہیں۔ مثلاً امیبا یا پیرامیشیئم وغیرہ۔

🔸نباتات نما جاندار الجی Algae کہلاتے ہیں۔ یہ کلوروفل رکھنے کی بنا پر فوٹو سنتھیسز کر سکتے ہیں۔

🔸ان میں تیسری قسم فنگس نما جانداروں کی ہے، مثلاً سلائم مولڈز۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
3۔ کنگڈم فنجائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آپ نے روٹی پر لگنے والی پھپھوندی دیکھی ہو گی۔ اس کے علاوہ مشروم کو کھایا بھی ہو گا۔ یہ دونوں فنجائی کی مثالیں ہیں۔

🔸یہ کثیر خلوی، یوکیریوٹک جاندار ہیں۔

🔸ان کے سیلز میں اکثر دو نیوکلیائی (نیوکلیئس کی جمع) ہوتے ہیں۔

🔸یہ بہت سخت جان ہوتے ہیں اور ہر قسم کی اشیاء پر اگ سکتے ہیں۔

🔸ان کی سیل وال کائیٹن Chitin کی بنی ہوتی ہے۔
یہ اپنی خوراک خود تیار نہیں کر سکتے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
4۔ کنگڈم پلانٹی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمام پودے، سبزیاں، پھل، درخت، جھاڑیاں، جڑی بوٹیاں، بیلیں، کائی وغیرہ اس کنگڈم سے تعلق رکھتے ہیں۔

🔸یہ کثیر خلوی یو کیریوٹک جاندار ہیں، جن میں کلوروفل ہونے کی وجہ سے اپنی خوراک خود تیار کر سکتے ہیں۔

🔸ان کے سیلز میں سیلولوز Cellulose کی بنی ہوئی سیل وال ہوتی ہے۔

🔸یہ پانی، خشکی اور نم دار جگہوں پر پائے جاتے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
5۔ کنگڈم اینیمیلیائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمام حیوانات، پرندے، کیڑے مکوڑے، ممالیہ، ریپٹائلز، مچھلیاں، گھونگھے وغیرہ اس کنگڈم سے تعلق رکھتے ہیں۔ انسان بھی اسی کنگڈم کی ایک نوع ہے۔

🔸یہ بھی کثیر خلوی، یوکیریوٹک جاندار ہیں مگر ان میں کلوروفل نہ ہونے کی بنا پر فوٹو سنتھیسز نہیں ہوتا۔

🔸ان میں کوئی سیل وال نہیں پائی جاتی۔

🔸یہ پانی اور خشکی دونوں میں پائے جاتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کنگڈمز پر گروہ بندی کا سلسلہ رکا نہیں بلکہ ہر کنگڈم کے اندر بھی گروہ بنائے گئے جنہیں فائلم کہا گیا اور فائلم کے اندر بھی گروہ بندی ہوئی۔ اس طرح سائنسدانوں نے گروہ بندی کے سات لیولز متعارف کروائے۔ یہ درج ذیل ہیں۔

1۔ کنگڈم Kingdom
⁦⁦
2۔ فائلم Phylum

3۔ کلاس Class

4۔ آرڈر Order

5۔ فیملی Family

6۔ جینس Genus

7۔ اسپی شیئز Species
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

معزز قارئین، “سائنس آسان” سیریز کا یہاں پر اختتام ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ مگر۔۔۔۔۔۔ یہی ایک نقطۂ آغاز ہے۔۔۔۔۔۔۔ اس سفر کا، جو آپ کو لے جاتا ہے سائنس کی دلچسپ، رنگین اور حیرت انگیز جادونگری میں۔ میں سمجھتا ہوں کہ اگر آپ ان دس اقساط کا بغور مطالعہ کر لیں اور تمام نکات کو اچھی طرح ذہن نشین کر لیں تو پھر آپ سائنس پر لکھے گئے بیشتر مضامین کو بآسانی سمجھ سکیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پچھلی قسط کا لنک

سائنس آسان (قسط 9: زندگی کی اکائی)

اس مضمون پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں